ریاست میں مثالی ضابط اخلاق کوسختی کے ساتھ نافذکیاجائے گا۔سی ای اورجت کمار کی پریس کانفرنس

چیف الیکٹورل آفیسر (سی ای او) تلنگانہ رجت کمارنے کہاکہ الیکشن کمیشن آف انڈیا کی جانب سے تلنگانہ اسمبلی انتخابات کے شیڈول کی اجرائی کے بعدریاست میں ماڈل کوڈ نافذ ہوچکا ہے ۔ سکریٹریٹ میں آج پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ماڈل کوڈکے نافذہونے کے ساتھ ہی سرکاری دفاتر ‘سرکاری عمارتوں‘بس اسٹانڈس ‘ ریلوے اسٹیشنس‘بریجس ‘برقی اورٹیلی فون پولس پرکسی بھی طرح کے بیانرس ‘پوسٹرس چسپاں نہیں کئے جاسکتے۔ ان عمارتوں اور مقامات سے اندرون 24گھنٹے بیانرس اور پوسٹرس کونکال دیا جائے گا۔ اس کے علاوہ سرکاری گاڑیوں سے سیاسی قائدین یا خانگی افراد کواستفادہ کرنے کی ممانعت رہے گی ۔ رجت کمار نے کہاکہ ماڈل کوڈپرسختی سے نفاذ کو یقینی بنانے کے لئے اندرون 24گھنٹہ تمام 31 اضلاع میں کنٹرول رومس اور شکایتی سیلس کاقیام عمل میں لایا جائے گا جہاں سے انتخابی عمل پر مسلسل نظررکھی جائے گی اور وصول ہونے والی شکایتوں کوالیکشن کمیشن آف انڈیا کوروانہ کیاجائے گا۔ انہوں نے کہاکہ سیاسی جماعتوں کوخانگی عمارتوں پرمالکان کی اجازت کے بعد بیانرس ‘پوسٹرس آویزاں کرنے اور نعرے تحریر کرنے کی اجازت رہے گی تاہم مالکان کی شکایت کی صورت میں اندرون 72گھنٹے اس موادکوہٹا دینا ہوگا۔ انہوںنے کہاکہ سرکاری ویب سائٹس پرسیاسی قائدین کی تصاویر کواندرون 72 گھنٹے ہٹادیا جائے گا ۔سی ای او نے کہاکہ ریاست میں جاری ترقیاتی پروگرامس کی تفصیلات ضلع کلکٹرس سے طلب کی گئی ہیں اور توقع ہے کہ یہ تفصیلات آئندہ تین دنوں میں وصول ہوجائیں گی جس میںپہلے سے جاری تعمیراتی کاموں کی فہرست اور اعلان کردہ ترقیاتی کام جو شروع نہیں کئے گئے‘ شامل ہیں۔ پہلے سے جاری ترقیاتی کاموں کوجاری رکھاجائے گا اور اعلان کردہ کام زیر التواء رہیںگے۔ سی ای او رجت کمارنے کہاکہ سرکاری خزانہ سے اشتہارات کی اجرائی روک دی جائے گی۔ سیاسی جماعتوں کی جانب سے انتخابی مہم پر خرچ کی جانے والی رقم پر کڑی نظررکھی جائے گی۔ اس کے علاوہ شراب اورنشیلی اشیاء کی منتقلی پربھی نظررکھی جائے گی ۔ انہوں نے کہاکہ انتخابات کے پرامن انعقادکے لئے حفاظتی دستوں کی بڑی تعداد کوتعینات کیاجائے گا۔ اس سوال پر کہ فہرست رائے دہندگان میں بے قاعدگیوں کے متعلق ایک عرضی ہائی کورٹ میں زیر سماعت ہے ‘پھرکس طرح انتخابات کے شیڈول کااعلان کردیاگیا ‘رجت کمار نے کہاکہ الیکشن کمیشن ایک دستوری ادارہ ہے اور اسے حاصل اختیارات کی روسے اس نے یہ فیصلہ لیاہے ۔ پی ٹی آئی کے بموجب رجت کمار نے کہاکہ اضلاع میں کنٹرول رومس قائم کئے جائیں گے جوہفتہ کے 24گھنٹے کام کریں گے اورہلپ لائن نمبر 1950 پر عوام شکایت درج کراسکتے ہیں۔ موبائیل اوراسٹاٹکس اسکواڈ کوتعینات کیاجائے گایہ اسکواڈ مثالی ضابط اخلاق کی خلاف ورزیوں کونوٹ کرے گا۔ الیکشن کمیشن‘ آئی ٹی (انکم ٹیکس) محکمہ کے عہدیداروںکے تعاون سے بینکوں میں بڑی لین دین پرخصوصی نظررکھے گا۔کمار نے مزید کہاکہ تلنگانہ میںایک مرحلہ میں 7دسمبرکو رائے دہی ہوگی اور11دسمبرکوووٹوں کی گنتی کی جائے گی۔ الیکشن کمیشن ‘12 نومبر کو گزٹ اعلامیہ جاری کرے گا۔ سوشل میڈیا کے بارے میں ایک سوال کاجواب دیتے ہوئے سی ای او تلنگانہ نے کہاکہ شکایت کی بنیاد پر سائبر کرائم سل (پولیس) کے اشتراک سے سخت کاروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ 10بجے شب سے 6بجے صبح تک انتخابی مہم چلانے پرامنتاع رہے گا۔

جواب چھوڑیں