شہباز شریف 10 دنوں کیلئے قومی احتساب بیورو کی حراست میں

پاکستان کی قومی احتساب بیورو (نیب) نے جمعہ کو سابق وزیر اعظم نواز شریف کے بھائی اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن کے لیڈر شہباز شریف کو 14 ارب کی ہاؤسنگ اسکیم ’ آشیانہ اقبال‘ میں بدعنوانی کے الزام میں گرفتار کر لیا۔پاکستان کے ’ڈان‘ کے مطابق صوبہ پنجاب کے سابق وزیر اعلیٰ شہباز شریف کو ہفتہ کو نیب کی عدالت میں پیش کیا جائے گا۔نیب کی عدالت بے پوچھ گچھ کیلئے مسٹر شہباز کو 14روزکی ریمانڈ مانگ کرے گا۔پاکستان مسلم لیگ -نواز کے صدر شہباز شریف پر الزام ہے کہ انہوں نے ہا ؤسنگ اسکیم ’آشیانہ اقبال‘کا ٹھیکہ کامیابی بولی لگانے والی کمپنی چودھری لطیف اینڈ سنز کی بولی کو منسوخ کر کے یہ ٹھیکہ ’لاہور کاسا ڈیولپرز‘ کو دے دیا۔لاہور کاسا ڈیولپرز،’ پیراگون سٹی پرائیویٹ لمیٹڈ گروپ‘ کی ایک کمپنی ہے۔ اس سے تقریبا 19.3 کروڑ کے نقصان ہونے کا اندازہ لگایا ہے۔مسٹر شہباز پر یہ بھی الزام ہے کہ پنجاب لینڈ ڈیولپمنٹ کمپنی کو’ آشیانہ اقبال ‘پروجیکٹ لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی کو فراہم کرنے کی ہدایت دی تاکہ اس کا ٹھیکہ لاہور کاسا ڈیولپرز کو دیا جا سکے۔ اس سے 71.5 کروڑ کا نقصان ہونے کا اندازہ ہے۔ اس سب کے بعد پروجیکٹ مکمل طور پر تہس نہس ہو گئی۔نیب اطلاعات کے مطابق، شہباز شریف قومی احتساب بیورو کی جانب سے پوچھے گئے سوالات پر انہیں مطمئن نہ کر سکے، جس پر انہیں گرفتار کر لیا گیا۔وزیر اطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’’نام نہاد خادم اعلٰی کو ان کی خدمت کا پھل ملنا شروع ہو گیا ہے‘‘۔ فیاض الحسن چوہان کے مطابق، ’’سابق حکومت کے دیگر کرپٹ عناصر بھی جلد جیل میں ہونگے‘‘۔بقول اْن کے، “شہباز شریف نے پیپرا قوانین کو نظر انداز کر کے غیر ملکی کمنیوں کو ٹھیکے دئیے۔ پوری کمپنی میں شہباز شریف کی اجازت کے بغیر ایک بھی افسر تعینات یا اس کا تبادلہ نہیں ہوتا تھا”۔آشیانہ اسکینڈل میں گرفتار سابق وزیراعلیٰ پنجاب اور قومی اسمبلی میں حزب اختلاف کے رہنما شہباز شریف کو 10 روزہ ریمانڈ پر نیب کے حوالے کردیا گیا جبکہ نیب پراسیکیوٹر نے 14 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی تھی۔ انہیں ہفتے کی صبح احتساب عدالت میں پیش کیا گیا تھا۔شہباز شریف کو قومی احتساب بیورو(نیب) لاہور کی احتساب عدالت پیش کر کے جسمانی ریمانڈ حاصل کیا گیا۔

جواب چھوڑیں