مدھیہ پردیش میں کانگریس کے ساتھ اتحادنہیں: اکھلیش

 سماج وادی پارٹی نے مدھیہ پردیش کے آنے والے اسمبلی انتخابات میں کانگریس کے ساتھ کسی بھی اتحاد کو خارج از امکان قراردیا۔ صدر سماج وادی پارٹی( ایس پی) اکھلیش یادو نے کہاکہ ہم نے ایک مفاہمت کیلئے طویل عرصہ تک انتظار کیا لیکن کانگریس نے اب تک ہاتھ ملانے کیلئے کوئی آمادگی ظاہر نہیں کی۔ بی جے پی کو شکست دینے کیلئے ہم‘ ہم خیال جماعتوں سے ہاتھ ملانا چاہتے ہیں۔ یادو‘ یہاں پارٹی ہیڈ کوارٹر پر ایک اجتماع سے خطاب کررہے تھے۔ اُنہوںنے کہاکہ سماج وادی پارٹی یاتو اپنے طورپر انتخابات میں مقابلہ کرے گی یا پھر گونڈوانا پارٹی( جی پی) کے ساتھ اتحاد کرے گی۔ صدر ایس پی نے کہاکہ ’’ سماج وادی پارٹی نے تو پہلے ہی اُس قدیم عظیم پارٹی سے اتحاد کرنے سے انکار کردیا ہے اور مجھے یقین ہے کہ دیگر ریاستوں میں بھی جہاں اسمبلی انتخابات ہونے والے ہیں‘ دیگر جماعتیں بھی اپنے امیدواروں کا جلد اعلان کریں گی‘‘۔ سینئر کانگریسی رہنماء ڈگ وجئے سنگھ کے ایک بیان کی طرف بالواسطہ اشارہ کرتے ہوئے یادو نے کہاکہ ایس پی اور بی ایس پی جیسی جماعتیں کسی بھی بات سے خوفزدہ نہیں ہیں۔ یہاں یہ تذکرہ بیجانہ ہوگا کہ ڈگ وجئے سنگھ نے حال ہی میں کہا تھا کہ بی ایس پی‘ مدھیہ پردیش میں کانگریس کے ساتھ اتحاد اِس لئے نہیں کررہی ہے کہ اُس کو( بی ایس پی کو) ‘ انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ( ای ڈی ) اور سی بی آئی کا خوف ہے۔ یادو نے بتایاکہ سماج وادی پارٹی ‘ مدھیہ پردیش میں بہوجن سماج پارٹی کے ساتھ اتحاد کے امکانات تلاش کرنے کیلئے تیار ہے۔ اپنی تقریر میں اکھلیش یادو نے ریاستی حکومت کو ہدف تنقید بنایا اور کہاکہ چیف منسٹر یوگی آدتیہ ناتھ پر سے عوام کا اعتماد اُٹھ گیا ہے اور اُترپردیش میں امن وضبط کی صورتحال کلیتاً مفلوج ہوگئی ہے۔

جواب چھوڑیں