امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کی کم جانگ اُن سے ملاقات

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو شمالی کوریا کے مختصر دورہ کے بعد جنوبی کوریا پہنچ گئے ہیں۔ آج انہوں نے پیانگ یانگ میں کمیونسٹ رہنما کم جونگ ان سے ملاقات میں جوہری عدم پھیلاؤ اور امریکہ اور شمالی کوریا کے مابین دوسری سمٹ منعقد کرانے کے حوالے سے گفتگو کی۔ پومپیو نے کہا کہ ان کا یہ دورہ شاندار رہا۔ کل انہوں نے ٹوکیو میں جاپانی وزیر اعظم شینزو آبے سے ملاقات کے بعد کہا تھا کہ واشنگٹن حکومت خطہ کو جوہری ہتھیاروں سے پاک بنانے کی اپنی کوششیں جاری رکھے گی۔ وہ اس دورہ کے دوران جنوبی کوریا اور چین بھی جائیں گے۔امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کل دورہ جاپان پر ٹوکیو پہنچے جہاں وہ وزیر اعظم شنزو آبے اور وزیر خارجہ تارو کونو سے ملاقات کی۔ایشیا کے دورہ پر روانہ ہوتے وقت جمعہ کو پومپیو نے کہا کہ اْنھیں توقع ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے لیڈر کِم جونگ اْن کے مابین اگلے سربراہ اجلاس کے وقت اور مقام کے بارے میں مختلف سوچ کو آخری شکل دی جا سکے گی۔ تنہا ملک کا یہ ان کا چوتھا دورہ ہوگا، جہاں وہ شمالی کوریا کے لیڈر کِم جونگ اْن سے ملاقات کی۔جاپان جاتے ہوئے، پومپیو نے کہا کہ وقت اور مقام کے بارے میں پیچیدہ مسائل درپیش ہیں۔اْنھوں نے مزید کہا کہ اْنھیں توقع ہے کہ کِم کے ساتھ ان کی ملاقات میں تاریخ اور مقام سے متعلق فیصلہ ہوجائے گا۔یہ معلوم کرنے پر آیا ٹرمپ کی جانب سے وہ کِم کے لیے کوئی پیغام یا تحفہ لا رہے ہیں، پومپیو نے اخباری نمائندوں کو بتایا کہ: ”اس وقت میں کوئی چیز ساتھ نہیں لایا جس کا اس مرحلے پر ہم کوئی عام اعلان کر سکیں۔اس سال پومپیو کا شمالی کوریا کا یہ دورہ ایسے میں ہو رہا ہے جب امریکہ اور شمالی کوریا اپنے قائدین کے درمیان دوسرے سربراہ اجلاس کا بندوبست کر رہے ہیں۔اس ہفتے کے اوائل میں پومپیو نے کہا تھا کہ ”مجھے پوری امید ہے کہ اس کے بعد ہمارے مابین بہتر سمجھ بوجھ، گہری پیش رفت اور دونوں سربراہان کے درمیان نہ صرف سربراہ اجلاس کے لیے بندوبست کا معاملہ آگے بڑھانے میں مدد ملے گی، بلکہ جوہری ہتھیاروں کو تلف کرنے کی راہ نکلے گی، جس کے لیے کوششیں جاری رکھی جائیں گی۔

جواب چھوڑیں