ٹی آر ایس کو ووٹ دینا بی جے پی کی تائید کے مماثل: محمد علی شبیر

قائد اپوزیشن تلنگانہ کونسل محمد علی شبیر نے کہا کہ آئندہ انتخابات میں ٹی آر ایس کو ووٹ دینا بی جے پی کو ووٹ دینے کے مماثل ہے۔ کے سی آر نے 2014ء میں عوام سے وعدے کرتے ہوئے اقتدار حاصل کیا تھا تاہم ساڑھے چار سالہ دورِ حکومت میں انہوں نے عوام سے کئے گئے ایک بھی وعدہ کو پورا نہیں کیا۔ کے سی آر نے وزیراعظم نریندر مودی سے نمائندگی کرتے ہوئے تلنگانہ میں نئے زونل سسٹم کی منظوری حاصل کی لیکن کے سی آر نے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کے لئے مودی سے کوئی نمائندگی کیوں نہیں کی؟ ۔ محمد علی شبیر آج قطب اللہ پور میں منعقدہ اقلیتی کنونشن سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ آج سارے ملک کی نظریں تلنگانہ کے انتخابات پر لگی ہوئی ہیں۔ اسمبلی انتخابات، کے سی آر کے لئے سبق آموز رہیں گے۔ کانگریس پارٹی، اقلیتوں کی ترقی اور ان کے حقوق و مفادات کے تحفظ کی پابند ہے۔ وائی ایس راج شیکھر ریڈی کے دورِ حکومت میں حیدرآباد میں کئی ترقیاتی کام انجام دئیے گئے۔ آوٹر رنگ رود، پی وی این آر ایکسپریس ہائی وے، کئی فلائی اوورس کی تعمیر، دریائے کرشنا سے شہر کو پانی کی سربراہی، کانگریس حکومت کا کارنامہ ہے۔ انہوں نے آئندہ انتخابات میں کانگریس پارٹی کو ووٹ دینے کی عوام سے اپیل کی۔ کانگریس قائد ریونت ریڈی نے الزام عائد کیا کہ کے سی آر نے نریندر مودی کی خوشامدی کے لئے تلنگانہ میں قبل از وقت انتخابات کی راہ ہموار کی ہے اور آئندہ پارلیمنٹ انتخابات میں بی جے پی کی تائید کرنے کا نریندر مودی سے وعدہ کیا ہے۔ ریڈی نے کہا کہ کے سی آر، مخالف تلنگانہ جذبات کو ابھارتے ہوئے چیف منسٹر اے پی چندرا بابو کو نشانہ بنارہے ہیں۔ کانگریس، تلگودیشم اور دیگر جماعتوں کے عظیم اتحاد سے کے سی آر بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکے ہیں۔ چنانچہ وہ کانگریس قائد بشمول سونیا گاندھی، اتم کمار ریڈی کے خلاف نازیبا الفاظ کا استعمال کرتے ہوئے سطحی سیاست پر اتر آئے ہیں۔ انہوں نے عوام سے سوال کیا کہ تلنگانہ میں حکمرانی کے لئے ایک قابل ایڈمنسٹریٹر کی ضرورت ہے؟ یا ایک پاسپورٹ بروکر کی ضرورت ہے؟ انہوں نے الزام عائد کیا کہ کے سی آر نے رمضان میں افطار پارٹی کا اہتمام کرکے مسلمانوں کا استحصال کیا ہے جبکہ 12فیصد تحفظات کے لئے وزیر اعظم سے منظوری حاصل کیوں نہیں کی گئی؟ انہوں نے کہا کہ اگر کے سی آر دوبارہ اقتدار حاصل کریں گے تو تلنگانہ میں پھر ایک بار خاندانی حکومت قائم ہوگی۔ سابق مرکزی وزیر سروے ست نارائنہ نے اپنی تقریر میں کہا کہ سونیا گاندھی نے تلنگانہ عوام کی قربانیوں اور جذبات سے متاثر ہوکر تلنگانہ دیا ہے۔ انہوں نے عوام پر زور دیا کہ وہ کانگریس کو ووٹ دے کر اس پارٹی کو شاندار کامیابی سے ہمکنار کرائیں۔ چیرمین میناریٹی ڈپارٹمنٹ خواجہ فخر الدین نے کنونشن کی صدارت کی۔

جواب چھوڑیں