حکومت ‘پسماندہ طبقات کی بہبود کے عہد کی پابند: کے ٹی آر

تلنگانہ کے وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راماراو نے واضح کیا ہے کہ ریاستی حکومت سماجی ومعاشی پسماندہ گروپس کو اونچااٹھانے کی پابند عہدہے ۔انہوں نے ”مبسوط ترقی۔مسائل او رچیلنجس ”کے موضوع پر سنٹر فار اکنامک اینڈ سوشیل اسٹیڈیز کے زیراہتمام حیدرآباد میں منعقدہ بین الاقوامی سمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کمزور گروپس کی ضروریات کی تکمیل کرتے ہوئے مبسوط اور مساوی ترقی کے اقدامات کرے گی۔انہوں نے کہاکہ حکومت تلنگانہ اپنی فعال پالیسیوں اور بجٹ میں رقمی الاٹمنٹ کے ذریعہ سماجی۔معاشی عدم مساوات کی کمی کو دور کرنے کے لئے جدوجہد کر رہی ہے ۔انہوں نے دعوی کیا کہ تعلیم ،ریاستی حکومت کیلئے اہم شعبہ ہے ۔خواندگی،متوقع عمر اورطرز زندگی میں بہتری ،بہتر فی کس آمدنی کے لئے ضروری ہیں جہاں ہندوستان آگے بڑھ رہا ہیں ۔ترقی ،زندگی کے تمام شعبوں کے لئے مشترکہ موضوع رہا ہے ۔ترقی، بہبود او رجامع ترقی ملک کے بیشتر سیاسی نظام کے لئے اعلی ایجنڈہ ہیں۔ہندوستانی معیشت بہتر ہورہی ہے اور عوامی پالیسی اور شہر ی شراکت کے سبب اس کے فائدے نچلے طبقات کو ملنے لگے ہیں۔کے ٹی آر نے کہا کہ ریاستی حکومت نے 45,500کروڑروپئے سماجی خدمات کیلئے الاٹ کئے ہیں جو گزشتہ مالیاتی سال کے مکمل بجٹ کا 43فیصد ہے ۔گزشتہ مالیاتی سال کے مقابلے اس میں دس فیصد کا اضافہ ہوا ہے ۔انہوں نے کہاکہ ریاستی حکومت نے ایس سیز کیلئے 16,400کروڑ روپئے ، ایس ٹیز کے لئے 9600کروڑ روپئے ، اقلیتوں کے لئے 2000کرو ڑ روپئے ،بچوں ،خواتین،معذورین اور معمرشہریوں کیلئے 18,000کروڑروپئے بجٹ میں الاٹ کئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ تلنگانہ میں انوکھا سسٹم ہے جس کے تحت فنڈس جو خرچ نہیں کئے جاتے وہ آئندہ کے سال کے لئے آگے بڑھادیئے جاتے ہیں۔اس سلسلہ میں مناسب قانون سازی کی گئی ہے ۔انہوں نے کہاکہ ریاستی حکومت کے اہم پروگرام رعیتو بندھو کی ستائش ایک انقلابی پروگرام کے طورپر ماہرین معاشیات اور زرعی سائنسدانوں نے کی ہے ۔

جواب چھوڑیں