جوالاگٹہ بھی می ٹوتحریک میں شامل‘کوچ پر ذہنی ہراسانی کا الزام

می ٹوتحریک جوان دنوں مختلف سوشیل میڈیاپلیٹ فام پر چل رہی ہے جس سے دنیامیںایک طوفان سا اٹھ گیاہے۔ اس تحریک میں نیا داخلہ حاصل کرنے والوں کی اس فہرست میں صف اول کی سابق بیاڈمنٹن کھلاڑی جوالا گٹہ بھی شامل ہوگئی ہیں۔ انہوںنے اپنی ذہنی ہراسانی کی کہانی کو ٹوئٹر پر سلیکشن کے اساس پرشئیر کیاہے۔ اپنے ٹوئٹ میں انہوںنے کہاکہ2006 سے ان کے پاس ایک شخص چیف بن گیا اورمجھے قومی ٹیم سے باہر کردیا، حالانکہ میں تازہ ترین قومی چمپئن تھی۔ جب میں ریوسے واپس ہوئی تھی، مجھے قومی ٹیم سے پھر باہر کردیاگیا۔وجہ یہ بتائی گئی کہ میں نے کھیلناترک کردیاہے۔ حیدرآبادکی کھلاڑی نے اپنی دشمنی کے بارے میں کافی تشہیر کی ہے جوچیف نیشنل کوچ پی گوپی چند سے ان کی چل رہی تھی جس کے دوران انہوںنے الزام عائد کیاکہ وہ صرف سنگلز کھلاڑیوں پر ہی توجہ دیتے ہیں اور ڈبلزکونظرانداز کردیتے ہیں۔قبل ازیں جوالانے یہ بھی دعوی کیاتھاکہ گوپی چند پر تنقید کانتیجہ انہیں قومی ٹیم سے باہرہوناپڑا اوریہاںتک میرے ڈبلز کے جوڑی دار کوبھی نقصان اٹھانا پڑا ۔ تاہم انہوںنے اپنے ٹوئٹ میں گوپی چند کانام نہیں لیا۔ ارجن ایوارڈیافتہ جوالا گٹہ نے سال 2016 کے ایشین گیمس میں مکسڈڈبلز زمرہ میں گولڈ میڈل جیتاتھا۔ کامن ویلتھ گیمس میں انہوںنے ایک گولڈدو سلور میڈل اورایک برانز بھی جیتا۔

جواب چھوڑیں