طوفان مائیکل کیٹیگری 4 میں داخل‘بڑے پیمانہ پر تباہی کا خدشہ۔فلوریڈا میں ہنگامی حالت نافذ

ریاست فلوریڈا کی طرف بڑھنے والا طوفان مزید خطرناک ہوگیا ہے اور اس کی شدت کیٹیگری 4 کے بڑے طوفان میں تبدیل ہوگیا ہے، خدشہ ہے کہ طوفان آج فلوریڈا کے ساحلی علاقوں سے ٹکرائے گا۔’مائیکل‘نامی سمندری طوفان کے ساتھ چلنے والی ہواوؤں کی رفتار ایک 195 کلو میٹر فی گھنٹہ ہے۔ نیشنل ہری کین سینٹر کے مطابق طوفان آج کی دوپہر تک ساحلی علاقوں سے ٹکرا سکتا ہے۔گورنر فلوریڈا رک اسکاٹ کا کہنا ہے کہ مائیکل‘ ایک خوف ناک طوفان ہے جس کے نتیجے میں ریاست کے کچھ حصوں خاص طور پر پین ہینڈل کے علاقے میں بڑے پیمانے پر تباہی ہوسکتی ہے، نیشنل گارڈ کے ڈھائی ہزار اہل کار امدادی کاموں کے لیے تعینات کردئیے گئے ہیں۔صدر ٹرمپ نے فلوریڈا کے لیے ہنگامی حالات کا اعلان کرتے ہوئے امدادی کاموں کے لیے وفاقی فنڈز کے اجرا کا حکم دیا ہے۔ریاست الباما اور جارجیا میں بھی طوفان کے اثرات محسوس کئے جاسکتے ہیں۔طوفان کی شدت منگل کو کیٹیگری 2′ ریکارڈ کی گئی تھی لیکن خلیجِ میکسیکو کے گرم موسم کے باعث منگل کی شب تک اس کی شدت بڑھ کر کیٹیگری 4′ ہوگئی ہے۔بحرِ اوقیانوس میں جنم لینے والے طوفان مائیکل کی شدت میں اضافہ ہوگیا ہے جس کے بعد حکام نے امریکی ریاست فلوریڈا کے ساحلی علاقوں میں آباد پانچ لاکھ افراد کو لازمی انخلا کی ہدایت کردی ہے۔امریکہ کے ‘نیشنل ہریکین سینٹر’ کا کہنا ہے کہ طوفان کی شدت ‘کیٹیگری دو’ سے بڑھ کو ‘کیٹیگری چار’ ہوچکی ہے اور وہ آج کسی وقت فلوریڈا کے ساحلی علاقوں سے ٹکرائے گا۔طوفان کی شدت منگل کو ‘کیٹیگری 2′ ریکارڈ کی گئی تھی لیکن خلیجِ میکسیکو کے گرم موسم کے باعث منگل کی شب تک اس کی شدت بڑھ کر کیٹیگری 4’ ہوگئی ہے۔طوفان کے تحت چلنے والی ہواوں کی رفتار 210 کلومیٹر فی گھنٹہ ہے اور ‘نیشنل ویدر سروس’ نے خبردار کیا ہے کہ اس شدت کی ہوائیں پختہ گھروں کی چھتوں اور دیواروں کو بھی انتہائی نقصان پہنچانے کی صلاحیت رکھتی ہیں۔حکام نے خبردار کیا ہے کہ طوفان کے باعث 13 فٹ تک بلند لہریں ساحلی علاقوں سے ٹکرائیں گی جس سے ان علاقوں کے زیرِ آب آنے کا خدشہ ہے۔چہارشنبہ کو علی الصباح طوفان فلوریڈا کے شہر پاناما سٹی سے 325 کلومیٹر دور تھا اور تیزی سے فلوریڈا کے ساحل کی جانب بڑھ رہا تھا۔’نیشنل ہریکین سینٹر’ کا کہنا ہے کہ طوفان کے باعث فلوریڈا کے علاوہ الاباما اور جارجیا میں طوفانی بارشیں ہوں گی جب کہ گزشتہ ماہ ہی طوفان فلورینس کا نشانہ بننے والی ریاستوں شمالی اور جنوبی کیرولائنا میں بھی شدید بارشوں کی پیش گوئی ہے۔حکام نے خبردار کیا ہے کہ بعض علاقوں میں ایک فٹ تک بارش پڑنے کا اندیشہ ہے جس سے صورتِ حال مزید خراب ہوسکتی ہے۔طوفان کی شدت میں اضافے کے بعد فلوریڈا کے ساحلی علاقوں میں آباد افراد کو لازمی انخلا کی ہدایت جاری کردی گئی ہے۔ریاست کے گورنر رِک اسکاٹ آج صبح اپنے ایک ٹوئٹ میں شہریوں سے کہا ہے کہ ان کے پاس محفوظ مقامات پر منتقل ہونے کے لیے صرف چند گھنٹوں کا وقت ہے جس کے بعد ان کے بقول صورتِ حال خراب ہونا شروع ہوجائے گی۔طوفان سے قبل صدر ٹرمپ نے پوری فلوریڈا ریاست میں ہنگامی حالت نافذ کردی ہے جس کے نتیجے میں طوفان سے قبل اور بعد میں امدادی سرگرمیوں کے لیے وفاقی انتظامیہ مدد فراہم کرسکے گی۔

جواب چھوڑیں