فاضل بجٹ کی حامل ریاست تلنگانہ 2لاکھ کروڑ کی مقروض۔ محمد علی شبیر کا الزام

تشکیل تلنگانہ کے بعد11 ہزار کروڑ روپے کا فاضل بجٹ رکھنے والی ریاست تلنگانہ ٹی آر ایس کے چار سالہ دور اقتدار میں2لاکھ کروڑ روپے کی مقروض ہوچکی ہے ۔ ان خیالات کا اظہار قائد اپوزیشن قانون ساز کونسل محمد علی شبیر نے حلقہ اسمبلی کاماریڈی کے ما چا ریڈی منڈل میں منعقدہ انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ انہوںنے کہا کہ ٹی آر ایس قائدین نے من مانی کرتے ہوئے عوامی رقم کا بیجا استعمال کیا ہے ۔ انہوںنے کہا کہ جب وہ وزیر تھے تب دبئی میں پریشان حال افراد کو جن میں بعض افراد کے پاس پاسپورٹ بھی نہیں تھے، بحفاظت وطن واپس لانے کے اقدام کرچکے ہیں اب بھی کئی افراد خلیجی ممالک میں بیحد پریشان حال ہیں۔ ان کا کوئی پرسان حال نہیں ہے۔ اور ان کے تعلق سے کے سی آر اور ان کے فرزند کو کوئی دلچسپی نہیں ہے ۔ کانگریس اقتدار حاصل کرتے ہی بیروزگار نوجوانوں کو روزگار فراہم کرے گی ۔ کسانوں کا دولاکھ روپے کا قرض بیک وقت معاف کردے گی ۔ جبکہ ٹی آر ایس حکومت نے چارسالہ دور اقتدار میں کسانوں کا17ہزا ر کروڑ روپے کا قرض ہنوز معاف نہیں کیا ۔ کانگریس اقتدار حاصل کرتے ہی ڈواکرا گروپ کے سنگموں کو بغیر سود کے قرض فراہم کرے گی ۔ سال میں 6 گیاس سلنڈرس مفت دئیے جائیں گے ۔ زراعت کیلئے امدادی قیمت مقرر کرے گی ۔ راشن شاپ پر فی کس7کیلو باریک چاول فراہم کرے گی ۔ اس موقع پر وینو گوپال گوڑ، کیلاش سرینواس راؤ ، میر امتیاز علی ، محمد احمد اللہ خان اور دیگر موجود تھے۔

جواب چھوڑیں