سابق نکسلائٹس کی کانگریس پارٹی میں شمولیت ۔عوام ‘ کے سی آر سے بدظن۔ اتم کمار ریڈی کا دعویٰ

تلنگانہ کے10 اضلاع سے تعلق رکھنے والے تقریباً2ہزار سابق نکسلائٹس اور ان کے حامیوں نے آج گاندھی بھون پہنچ کر کانگریس پارٹی میں شمولیت اختیار کی ۔ بھیم بھرت سابق نکسلائٹ کی قیادت میں سابق ماوسٹوں کو صدر پردیش کانگریس این اتم کمار ریڈی نے انہیں کھنڈوا پہنا کر پارٹی میں ان کا خیر مقدم کیا ۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں اتم کمار ر یڈی نے کہا کہ کے سی آر نے2014 میںان سابق نکسلائٹس کی باز آباد کاری کرنے اور انہیں سماجی دھارے میں شامل کرنے کا وعدہ کیا تھا ۔ برسراقتدار آنے کے بعد کے سی آر نے انہیں بھی دھوکہ دیا ۔ انہوںنے تیقن دیا کہ کانگریس برسر اقتدار آنے کے بعد سابق ماوسٹوں کی باز آبادی کاری کرے گی اور ان کے تمام مسائل حل کئے جائیں گے ۔ انہوںنے سابق نکسلائٹس سے اپیل کی ہے کہ وہ کے سی آر خاندان کی آمرانہ طرز حکمرانی کو ختم کرنے کیلئے سرگرم عمل ہوجائیں۔ اور 7دسمبر کو متعلقہ حلقوں میں کانگریس کے حق میں رائے دہی کیلئے عوام کو راغب کریں۔ انہوںنے کہا کہ سارے تلنگانہ میں عوام ، ٹی آر ایس سے سخت ناراض ہیں۔ ہر طرف کانگریس کی لہر جاری ہے۔ اتم کمار ریڈی نے الزام عائد کیا کہ کے سی آر خاندان ‘ مشن بھاگیرتا پراجکٹس کے کنٹراکٹرس سے 6 فیصد کمیشن وصول کررہا ہے اور انتخابات میں اس رقم کے ذریعہ رائے دہندوں میں شراب تقسیم کرکے دوبارہ اقتدار حاصل کرنے کی کوشش کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 9 ماہ قبل اسمبلی تحلیل کرنے کی وجہ یہی ہے کہ عوام کو جوابدہی سے چھٹکارا حاصل کیا جائے۔ کے سی آر نے آمرانہ طرز حکمرانی سے جمہوریت کو پامال کیا ہے۔ عاملہ اور صحافتی اداروں پر حکومت کی تائید میں خبریں شائع کرانے کے لئے دباؤ ڈالا جارہا ہے۔ کے سی آر حکومت سے کوئی بھی طبقہ خوش نہیں ہے۔ ڈبل بیڈروم مکانات کی فراہمی کا وعدہ کرکے بے گھر افراد کو مایوس کیا گیا۔ ہر گھر سے ایک فرد کو ملازمت دینے‘ گھر گھر پینے کے پانی کی سربراہی‘ ایک لاکھ نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے‘ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کے نام پر دھوکہ دیا گیا۔ اتم کمار ریڈی نے کہاکہ کانگریس ‘ تلگودیشم اتحاد پر ٹی آر ایس قائدین نکتہ چینی کررہے ہیں۔ جبکہ کے سی آر نے تلنگانہ تحریک کی سختی سے مخالفت کرنے والے قائدین ‘ ٹی سرینواس یادو‘ مہیندر ریڈی اور ٹی ناگیشور راؤ کو اپنی کابینہ میں شامل کیا۔ انہوں نے کہاکہ کانگریس نے ملک کو آزادی دلائی‘ کانگریس نے علحدہ ریاست تلنگانہ دیا۔ آج کانگریس پر الزامات عائد کئے جارہے ہیں۔ کے سی آر اور ان کے فرزند کے ٹی آر سابق وزیر اعظم اندرا گاندھی پر تنقید کررہے ہیں۔ جنہوں نے ملک کی سالمیت کے لئے اپنی جان کو قربان کردیا۔ انہوں نے کانگریس برسر اقتدار پر آنے کے بعد کسانوں کے 2 لاکھ روپیہ قرض معاف کرنے ‘ ایک لاکھ نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے‘ 10 لاکھ بیروزگار نوجوانوں کو ماہانہ 3 ہزار روپیہ بھتہ فراہم کرنے‘ تمام وظائف کی رقم کو دگنا کرنے‘ سفید راشن کارڈ پر فی کس 7 کیلو باریک چاول سربراہ کرنے، دلتوں کو تمام قسم کے اجناس مفت سربراہ کرنے‘ سالانہ 6 گیاس سلنڈر مفت مہیا کرانے‘ ماہانہ 200 یونٹ برقی بلز کی معافی کا وعدہ کیا۔ قبل ازیں سابق نکسلائیٹ بھیم بھرت نے آئندہ انتخابات میں تمام سابق ماوسٹوں کی جانب سے کانگریس پارٹی کی کامیابی کے لئے کام کرنے کا تیقن دیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *