چین کے ساتھ جاری تجارتی جنگ منفعت بخش: امریکہ

امریکی وزیرخزانہ اسٹیفن منوچین نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا کہ چین کے ساتھ جاری تجاری جنگ عالمی معیشت اور امریکہ کے لیے مفید ثابت ہوگی۔ انہوں نے عالمی مانیٹری فنڈ “آئی ایم ایف” کی طرف سے چین۔ امریکہ تجارتی محاذ آرائی پر انتباہ کو مسترد کردیا اور کہا ہے بیجنگ کے حوالے سے امریکی اقدامات درست ثابت ہوں گے۔العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق “آئی ایم ایف” کے انڈونیشیا کے شہر بالی میں منعقدہ سالانہ اجلاس کے موقع پر صحافیوں سے بات کرتیہوئے انہوں نے کہا کہ چین کیساتھ ہمارا ہدف بالکل واضح ہے۔ چین کے ساتھ ہمارے تجاری اور کارباری تعلقات متوازن ہونے چاہئیں۔خیال رہے کہ رواں ہفتے آئی ایم ایف نے خبردار کیا تھا کہ چین اور امریکہ کیدرمیان جاری اقتصادی محاذ آرائی عالمی معاشی شرح نمو میں کمی کا موجب بنے گی۔ آئی ایم ایف نے خبردار کیا کہ 2018ء اور 2019ء کے مالی سال کے دوران عالمی شرح نمو میں کمی کا واضح امکان موجود ہے۔تاہم امریکی وزیر خزانہ نے آئی ایم ایف کے اس خدشے کو مسترد کر دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمارے ساتھ چین کے تجارتی مسائل کے حل کی قیمت چین کو چکانی چاہیے۔منوچین کاکہنا تھا کہ چین کے حوالے سے ہماری پالیسی متوازن ہے۔ ہمارا ہدف چین کے ساتھ تعلقات میں توازن پیدا کرنا۔ درآمدات و برآمدات میں مساوات اور اپنی شرائط پر چین کے ساتھ کاروبار کو فروغ دینا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ اگر چین کے ساتھ معاملات طے پاجاتے ہیں تو یہ امریکی کمپنیوں، امریکی لیبر، یورپی ممالک، جاپان اور دوسرے اتحادیوں کے لیے بھی بہتر ہوں گے اور اس کا چین کو بھی فائدہ ہوگا۔

جواب چھوڑیں