ایودھیا پر وسیم رضوی کی فلم آئندہ ماہ ریلیز ہوگی

صدرنشین شیعہ وقف بورڈ سید وسیم رضوی نے پیر کے دن فلم ’’رام جنم بھومی‘‘ کا ٹریلر جاری کیا۔ یہ فلم 30 اکتوبر 1990 سے رام مندر تحریک کے دوران پیش آئے واقعات کی تاریخ ہے۔ 30 اکتوبر 1990 کو اترپردیش پولیس نے ایودھیا کی سمت بڑھنے والے کارسیوکوں پر فائرنگ کی تھی ۔وسیم رضوی اس فلم کے رائٹر اور پروڈیوسر ہیں جبکہ فلم کو سنوج مشرا نے ڈائرکٹ کیا ہے۔ رضوی نے اس فلم میں کام بھی کیا ہے۔ رضوی نے کہا کہ بابر کے گمراہ کن حمایتی ‘ ملک میں خون خرابہ کے ذریعہ ماحول بگاڑنے پر تلے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ متنازعہ ڈھانچہ بابر کے کمانڈر میر باقی نے تعمیر کرایا تھا۔ وسیم رضوی نے کہا کہ میں نے دونوں فرقو ںمیں صلح صفائی کی بھی کوشش کی تھی۔ میں نے تجویز کیا تھا کہ ایودھیا میں اُس مقام پر رام مندر بن جائے اور مسجد امن لکھنو میں تعمیر ہو لیکن میری آواز بنیاد پرستوں کی آواز میں دب گئی ۔ صدرنشین شیعہ وقف بورڈ نے بتایا کہ فلم 30 اکتوبر تا 2 نومبر 1990کے واقعات سے شروع ہوتی ہے۔ اُس وقت غیرمسلح کارسیوکوں پر گولی چلی گئی ۔انہوں نے کہا کہ فلم میں کسی بھی فرقہ کو نشانہ نہیں بنایا گیا ہے۔ اس کے بجائے سماجی برائیوں بشمول حلالہ کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ فلم میں منوج جوشی‘ گووند نام دیو‘ نازنین پٹنی‘ راجیو سنگھ‘ دشا سچدیو اور آدتیہ نے اہم رول ادا کئے ہیں۔ سنے کرافٹ پروڈکشن کے بیانر تلے بنی یہ فلم 2 گھنٹے سے کچھ زائد کی ہے۔ یہ آئندہ ماہ ریلیز ہوگی۔

جواب چھوڑیں