ٹی آر ایس کو جماعت اسلامی ہند کی تائید۔امیر حلقہ حامد محمد خان کا اعلان ۔ صحافیوں سے بات چیت

امیر حلقہ جماعت اسلامی ہند تلنگانہ حامد محمد خان نے آج کہا کہ جماعت اسلامی ہند، تلنگانہ میں7 دسمبر کو منعقد شدنی اسمبلی انتخابات میں چند حلقوں کے سواء ساری ریاست میں حکمراں تلنگانہ راشٹرا سمیتی ( ٹی آر ایس ) کی تائید کرے گی ۔ انہوںنے کہا کہ جماعت اسلامی ہند کی مجلس شوریٰ نے اس فیصلے سے قبل ملک اور ریاست کی صورتحال کا جائزہ لیا ۔ گذشتہ10 برسوں کے دوران مختلف پارٹیوں کی حکومتوں کی کارکردگی کا تقابل کیا ہم نے مختلف سروے کے نتائج کو ذہن میں رکھ کر تمام سیاسی جماعتوں کے سربراہوں سے تفصیلی ملاقات بھی کی تھی ۔ انہوںنے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مرکزمیں بی جے پی کے اقتدار پر آنے کے بعد ملک کے حالات ابتر ہوچکے ہیں۔ جمہوری فضاء کو باقی رکھنے کیلئے جماعت اسلامی ہند سیکولر ازم اور جمہوری کردار کی حامل تمام پارٹیوں کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔ ہم نے ایسی سیاسی جماعت کو مسترد کردیا جو فسطائیت پر ایقان رکھتی ہے ۔ اور سماج کو تقسیم کرتی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ ٹی آر ایس ایک سیکولر جماعت ہے ٹی آر ایس نے عوامی فلاح وبہبود کے کئی کاموں کا انجام دیا ۔ فلاحی اسکیمات کو موثر طور پر نافذ کیا ۔ شہر حیدرآباد اور تلنگانہ میں امن وامان کو قائم رکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ فی الوقت ہمارے سامنے اسمبلی انتخابات ہیں اسلئے ہم نے ٹی آر ایس کی تائید کا فیصلہ کیا ہے ۔2019 کے پارلیمانی انتخابات میں اگر ٹی آر ایس ، بی جے پی سے دوستی کرے گی تو جماعت اسلامی، اس کی بھر پور مخالفت کرے گی ۔ انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ جن علاقوں میں بی جے پی کے امیدوار کی کامیابی کے امکانات ہیں، وہاں مضبوط سیکولر امیدوار کی تائید کریں ۔ مسلمان، ٹی آر ایس امیدواروں کی مکمل تائید کرتے ہوئے انہیں کامیاب بنائیں‘ تاکہ تلنگانہ میں امن و امان مستحکم ہوسکے ۔

جواب چھوڑیں