کرناٹک میں بس نہر میں گرپڑی‘ 25 ہلاک

کرناٹک کے ضلع منڈیا میں ہفتہ کے دن ایک خانگی بس جس میں زیادہ تر اسکولی بچے سوار تھے‘ نہر میں گرپڑی۔ کم ازکم 25 افراد ہلاک ہوئے۔ پولیس نے یہ بات بتائی۔ پانڈو پور تعلقہ کی وی سی کنال میں بس غرقاب ہوگئی۔ 23 نعشیں نکالی گئیں۔ مرنے والوں میں زیادہ تر اسکولی بچے ہیں جو آدھے دن کے اسکول کے بعد گھر لوٹ رہے تھے۔ بچوں کے غمزدہ رشتہ دار رو رہے تھے۔ ریسکیو (بچاؤ) ٹیموں نے ایک کے بعد ایک نعشیں نکالیں۔ ضلع حکام نے بس کو نہر سے نکالنے کے لئے کرین منگوایا۔ پولیس کو ہجوم پر قابو پانے میں دقت آئی کیونکہ قریبی علاقوں میں رہنے والوں کی بھیڑ مقام حادثہ پر اکٹھا ہوگئی تھی۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ انہوں نے پولیس کے پہنچنے سے قبل 3 افراد کو بچایا۔ ڈپٹی چیف منسٹر جی پرمیشور نے دکھ ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مجھے پتہ چلا ہے کہ بس نہر میں گرپڑی اور 25 جانیں گئیں۔ چیف منسٹر ایچ ڈی کماراسوامی اپنی تمام سرکاری مصروفیات منسوخ کرکے مقام حادثہ پر پہنچ گئے ۔ یو این آئی کے بموجب حادثہ ہفتہ کی دوپہر لگ بھگ 12 بجے پیش آیا۔ بس‘ پانڈو پورہ سے منڈیا جارہی تھی۔ موضع کنگنا مراڈی میں وہ اچانک سڑک سے پھسل گئی اور دریائے کاویری کی وشویشوریا کنال میں جاگری۔ ضلع انچارج وزیر سی ایس پتاراجو نے جنہوں نے مقام حادثہ کا دورہ کیا‘ اخباری نمائندوں کو بتایا کہ 23 نعشیں نکالی گئی ہیں اور شبہ ہے کہ مزید 2-3 نعشیں نہر میں ہوسکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ڈرائیور کی لاپرواہی حادثہ کی اصل وجہ ہے کیونکہ نہر‘ سڑک سے کافی دور ہے ۔ مرنے والوں میں 10 عورتیں‘ 6 مرد‘ 3 لڑکے لڑکیاں شامل ہیں۔ نہر میں پانی روک دیا گیا اور لاپتہ نعشوں کی تلاش جاری ہے۔ ابتدائی اطلاعات میں کہا گیا کہ بس میں کم ازکم 5 اسکولی بچے سفر کررہے تھے۔ ساتویں جماعت کا روہت کھڑکی سے چھلانگ لگاکر تیر کر کنارے پہنچنے میں کامیاب رہا۔ وہ صدمہ میں ہے۔ اسے ہسپتال میں شریک کرایا گیا ہے۔

جواب چھوڑیں