انتخابی نتائج تاریخی ہوں گے : اتم کمار ریڈی

صدر پردیش کانگریس تلنگانہ این اتم کمار ریڈی نے آج کہا کہ اسمبلی انتخابات کے نتائج تاریخی اور چونکادینے والے ہوں گے جن میں کانگریس کی زیر قیادت عظیم اتحاد کی کامیابی یقینی ہے ۔ آج یہاں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے اتم کمار ریڈی نے کہا کہ عوام نے ٹی آر ایس کو مسترد کردیا ہے اور11دسمبر کو ووٹوں کی گنتی کے بعد باوقار انداز میں کانگریس کی اقتدار پر واپسی ہوگی اور12دسمبر کو کانگریس حکومت تشکیل دی جائے گی ۔ ٹیلی ویژن چیانلوں کی پیش قیاسی جس میں ٹی آر ایس کو دوبارہ حکومت بناتے ہوئے دکھایا جارہا ہے ، کو غیر درست قرار دیتے ہوئے ریڈی نے کہا کہ انڈیا ٹوڈے ٹیلی ویژن چیانل کے کنسلٹنٹ ایڈیٹر راج دیپ سردیسائی نے خود انہیں فون کرتے ہوئے بتایا ہے کہ اگزٹ پول نتائج بھروسہ کرنے کے قابل نہیں ہیں۔ جبکہ انڈیا ٹوڈے کی جانب سے کی گئی پیش قیاسی میں ٹی آر ایس کو79-91 حلقوں پر کامیاب ہوتا ہوا بتایا گیا ہے ۔ انہوںنے کہا کہ راج دیپ سردیسائی نے واضح الفاظ میں کہا کہ امکانی نتائج دیکھ کر تشویش میں مبتلا نہ ہوں اور وہ خود بھی ان نتائج سے اتفاق نہیں کرتے ۔ ان کا احساس ہے کہ تلنگانہ میں کانگریس اور ٹی آر ایس کے درمیان کانٹے کا مقابلہ دیکھا گیاہے ۔ صدر ٹی پی سی سی نے کہا کہ انہیں مکمل یقین ہے کہ تمام پانچ ریاستوں میں کانگریس کو زبردست کامیابی حاصل ہوگی ۔ انہوںنے کہا کہ ایسے تمام چیانلوں جن میں بی جے پی اور ٹی آر ایس کو کامیاب ہوتا ہوا دکھایا جارہا ہے ، وہ تمام بی جے پی کے زیر اثر چیانلس ہیں ۔ اس لئے ان چیانلوں پر بھروسہ نہیں کیا جاسکتا ۔ اتم کمار ریڈی نے انتخابی مہم میں جوش وخروش کے ساتھ حصہ لینے پر کانگریس ، تلگودیشم ، سی پی آئی ، ٹی جے ایس اور ایم آر پی ایس قائدین کارکنوں اور عوام سے اظہار تشکر کیا ۔ انہوںنے کہا کہ حیدرآباد اور اضلاع کے کئی اسمبلی حلقہ جات میں لاکھوں رائے دہندوں کے نام فہرست سے حذف کئے جانے کیلئے الیکشن کمیشن کو مورد الزام ٹہرایا ۔ جس نے فہرست رائے دہندگان کو درست کئے بغیر جلد بازی میں انتخابات منعقد کئے جس کی وجہ سے لاکھوں افراد ووٹ کے حق سے محروم ہوگئے ۔ انہوںنے کہا کہ کانگریس نے اس مسئلہ کو چیف الیکشن کمیشن کے روبرو پیش کیا اور عدالت سے بھی رجوع ہوئی اس کے باوجود فہرست رائے دہندگان میں خامیوں کو دور نہیں کیا گیا۔ اے وی ایم مشینوں سے چھیر چھاڑ کا شبہ ظاہر کرتے ہوئے انہوںنے کانگریس ، تلگودیشم ، سی پی آئی کارکنوں کو ہدایت دی کہ وہ آئندہ دو دنوں تک متعلقہ حلقہ کے اسٹرانگ رومس پر نظر رکھیں ۔ بعض مقامات سے اطلاع ملی کہ اسٹرارنگ روم کے باہر سرکاری عہدیدار نظر آئے ہیں۔ انہوںنے چیف الیکٹورل آفیسرس سے خواہش کی ہے کہ وہ عظیم اتحاد کے کارکنوں کو اسٹرانگ روم کے باہر آئندہ دونوں تک نگرانی کی اجازت دیں تاکہ شکوک وشبہات کو دور کیا جاسکے ۔ صدر تلنگانہ کانگریس نے چیف الیکٹورل آفیسر سے خواہش کی ہے کہ وہ متعلقہ حلقوں کے پولنگ ایجنٹس کو ہی رائے شماری کے مراکز پر متعین کرنے کی اجازت دیں۔ تاکہ وہ مشین کے نمبرات کی جانچ کرسکیں۔ کے سی آر اور کے ٹی آر کی جانب سے سابق میں 100 تا105 نشستوں پر ٹی آر ایس کی کامیابی کا دعویٰ کیا گیا تھا ۔ بعدازاں وہ70 ۔80 تک محدود ہوگئے ۔ صدر تلنگانہ تلگودیشم ایل رمنا نے کہا کہ12 دسمبر کو پیپلز فرنٹ کی حکومت قائم ہوگی ۔ ہمارا اتحاد، آئندہ بھی برقرار رہے گا ۔ مشترکہ ایجنڈہ کے تحت ہم تلنگانہ کی ترقی کے لئے کام کریں گے ۔ انہوںنے ٹی آر ایس قائدین کے اس الزام کو مسترد کردیا کہ چندرا بابو نائیڈؤ امراوتی سے عظیم اتحاد کی حکومت میں مداخلت کریں گے ۔ انہوںنے کہا کہ تلنگانہ کے قائدین ہی حکومت میں شامل رہیں گے۔ کسی بھی قسم کی مداخلت کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ غیر ضروری عوام کو گمراہ کیا جارہا ہے۔

جواب چھوڑیں