رام مندر کی تعمیر کی مخالفت پر‘ حکومت کا تختہ اُلٹ دینے سبرامنین سوامی کی وارننگ

 بی جے پی لیڈر سبرامنین سوامی نے آج وارننگ دی ہے کہ اگر مرکز یا حکومت اترپردیش نے ایودھیا میں رام مندر کی مخالفت کی تو وہ ( سوامی) ’’ حکومت کا تختہ اُلٹ دیں گے‘‘۔ اُنہوںنے یہاں کل ‘ جواہر لال یونیورسٹی میں ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ’’ اگر ہمارے معاملہ( رام مندر کو) جنوری کی فہرست میں شامل کیا گیا تو ہم ‘ 2ہفتو ں میں کامیابی حاصل کرلیں گے کیونکہ میرے دو مخالف فریقین ‘ مرکزی حکومت اور یوپی حکومت ہیں یا اِن ( حکومتوں) کے پاس میری مخالفت کرنے کی تراکیب ہیں؟ اگر ہیں تو میں اِس حکومت کا تختہ اُلٹ دوں گا‘ اگر چہ میں جانتاہوں کہ وہ ( ارباب حکومت) ایسا نہیں کریں گی‘‘۔ سوامی نے دعویٰ کیاکہ وہ مسلمانوں سے واقف ہیں جنہیں ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔ ’’ میں مسلمانوں سے شخصی طورپر ملاقات کرتاہوں اور وہ مجھ سے کہتے ہیں کہ اُنہیں ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر پر کوئی اعتراض نہیں ہوگا‘‘۔ کیس کی مدت سماعت کے بارے میں وضاحت کرتے ہوئے سوامی نے کہاکہ ’’ سنی وقف بورڈ نے یہ دعویٰ کرتے ہوئے ایک کیس دائر کیا کہ مغل حکمراں بابر نے ہماری اراضی پر قبضہ کیا تھا۔ مذکورہ بورڈ نے ہرگزنہیں کہا کہ وہ ‘ بابری مسجد کی دوبارہ تعمیر چاہتا ہے۔ بورڈ نے بس اتنا کہا کہ یہ ہماری ملکیت ہے۔ ہندوفریقین جیسے رام جنم بھومی نیاس اور نرموہی اکھاڑہ نے کہاکہ وہاں دومنادر تھے جن کے وہ ٹرسٹی تھے اور یہ منادر اُنہیں دیئے جانے چاہئیں ۔ الہ آباد ہائیکورٹ نے دونوں ہندوفریقین کے مقدمہ کی سماعت کی تھی اور کہاتھاکہ یہ رام جنم بھومی اور 2گنبدان ہندؤں کو جائیں گے اور ایک گنبد ‘ مسلمانوں کو جائے گی‘‘۔

جواب چھوڑیں