سرفراز کا ٹسٹ قیادت چھوڑنے کا اشارہ

پاکستانی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے ٹیم کی مسلسل ناقص کارکردگی کے بعد ٹسٹ ٹیم کی قیادت چھوڑنے پر غور شروع کردیا ہے۔ 2009 میں سری لنکن ٹیم پر حملے کے بعد سے پاکستان کو اپنی تمام ہوم سیریز متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کے میدانوں میں میں کھیلنی پڑیں اور اس دوران 8 سال تک پاکستان کو صحرائے عرب میں کسی بھی ہوم سیریز میں شکست نہیں ہوئی۔ لیکن مصباح الحق کے قیادت چھوڑنے اور یونس خان کے ہمراہ ریٹائرمنٹ کے بعد سے ٹیم کو مشکلات کا سامنا ہے اور اس دوران یو اے ای میں ہونے والے 7 میاچس میں سے ٹیم کو 4 میں شکست اور 2 میں فتح نصیب ہوئی۔ اس کی نسبت مصباح اور یونس کی موجودگی میں پاکستان نے عرب امارات میں 24 ٹسٹ کھیلتے ہوئے 13 میں کامیابی سمیٹی اور اسے صرف 4 میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ ٹیم کی مسلسل شکستوں کے سبب سرفراز احمد نے تسلیم کیاکہ وہ دباؤ کا شکار ہیں اور انہوں نے تسلیم کیاکہ اگر صورتحال اسی طرح چلتی رہی تو قیادت سے دستبرداری کے بارے میں سوچ سکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ دورہ جنوبی افریقہ مشکل ہے اور اگر میں اس مشکل دورے سے قبل یہ سب سوچتا ہوں تو یہ کسی کے بھی حق میں بہتر نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ اگر میں غلطی کرتا ہوں یا اگر ٹیم میری وجہ سے ہارتی ہے تو یقیناً میں اس بارے میں ضرور سوچوںگا اور اگر کچھ مجھے سے بہتر انداز میں ٹسٹ ٹیم کی قیادت کرسکتا ہے تو اسے ہی یہ ذمہ داری انجام دینی چاہیے۔ سرفراز احمد کے ساتھ ساتھ ٹیم کے دونوں سینئر بلے بازوں اظہر علی اور اسد شفیق بھی دباؤ کا شکار ہیں اور انہیں بیٹنگ میں غیرمستقل مزاجی کے سبب تنقید کا سامنا ہے۔

جواب چھوڑیں