سعودی لڑکی کو کناڈا میں پناہ حاصل

کناڈانے رہف محمد القنون کو پناہ دینے کی پیش کش کی ہے۔ اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے پناہ گزین نے اپنی ویب سائٹ پر شائع کیے گئے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ کینیڈا کی حکومت کی طرف سے رہف محمد القنون کو پناہ دینے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتا ہے۔ رہف القنون نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر پوسٹ میں کہا ہے کہ ’’اچھی اور بری خبریں!‘‘۔ اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے اْن کا اکاؤنٹ ’آف لائن‘ ہو گیا۔بیان میں کہا گیا ہے کہ “گزشتہ ہفتے تھائی لینڈ کی حکومت کی جانب سے رہف کو یو این ایچ سی آر کی طرف سے پناہ گزین کا سٹیٹس دلوانے کے لیے کی جانے والی تیز کوششوں اور کینیڈا کی حکومت کی طرف سے ہنگامی بنیادوں پر اسے اپنے ملک میں رہائش دینے اور اس کے سفر کا بندبست کرنے کے اقدامات اس معاملے کے کامیاب حل تک پہنچنے میں قلیدی اہمیت کے حامل رہے۔ رہف القنون آج تھائی لینڈ سے نکل چکی ہیں اور کینڈا کے سفر پر ہیں۔تھائی لینڈ کے ایئرپورٹ کے اہلکاروں کے حوالے سے، خبر میں بتایا گیا ہے کہ 18 برس کی سعودی شہری، رہف القنون جمعے کی شام ’کورین ایئر فلائیٹ‘ کے ذریعے بینکاک سے سیئول روانہ ہوئیں، جہاں سے وہ ’کنیکٹنگ فلائیٹ‘ لے کر ٹورنٹو پہنچیں گی۔رہف محمد القنون اپنے ہی خاندان سے خوفزدہ ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *