دونوں شہروں میں17 جنوری سے آٹو بند۔آٹو ڈرائیورس جے اے سی کا اعلان

تلنگانہ آٹو ڈرائیورس جے اے سی نے پولیس کی جانبداری اور اس کے دہرے موقف کے خلاف دونوں شہروں حیدرآباد اور سکندرآباد میں17 جنوری سے غیر معینہ مدت کے آٹو بند کا اعلان کیا ہے۔ جے اے سی نے آٹو ڈرائیورس سے اپیل کی ہے کہ وہ ’’ میں آٹو از سیف‘‘ پراجکٹ کا بائیکاٹ کریں ۔ اس پراجکٹ کو پولیس نے متعارف کرایا ہے۔ غیر معینہ مدت کیلئے آٹو بند کی نوٹس ، پولیس اور ٹرانسپورٹ محکمہ کو دی جاچکی ہے۔ کنوینر جے اے سی محمد امان اللہ خان ے آج یہاں میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے الزام عائدکیا کہ سٹی پولیس ، جانبدارانہ رویہ اپنا رہی ہے اور آٹو اولا اور اوبر ڈرائیورس سے نمٹنے میں دہرا معیار اپنا رہی ہے ۔ سٹی پولیس کمشنر یہ کہہ رہے ہیں کہ آٹو ڈرائیورس کو میٹر سے زیادہ چارجس وصول نہیں کرنا چاہئے مگر وہ کیابس کے بارے میں خاموشی اختیار کئے ہوئے ہیں۔ جبکہ کیابس ڈرائیورس، دن اور رات سرج چارجس کے نام پر مسافرین کو لوٹ رہے ہیں تمام کیابس کو ٹیکسی میٹر نصب کرنے کی تجویز رکھی گئی تھی مگر اس پر عمل نہیں کیا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ڈیزل سے چلنے والی کیابس کو شہر کی سڑکوں سے ہٹانا چاہئے ۔کیونکہ یہ کیابس، آلودگی پھیلا رہے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ دونوں شہروں کے آٹو ڈرائیورس، موجودہ شرحوں کے مطابق مسافرین کو لے جانے سے قاصر ہیں۔ گذشتہ 5 برسوں کے دوران آٹو شرحوں میں اضافہ نہیں کیا گیا ہے۔ اس لئے موجود ہ شرحوں کے مطابق مسافرین کو ان کے مقامات تک نہیں پہنچایا جاسکتا ۔ انہوں نے کہا کہ آٹو کرایوں میں اضافہ تک ’’ میں آٹو از سیف‘‘ پروگرام کو ملتوی کیا جانا چاہئے ۔ پریس کانفرنس میں ماروتی راؤ جگتاب، شاکر الدین ، جبران حسین، ایم اے سلیم، اے ستی ریڈی ، محمد عظیم الدین، محمد لطیف اور فاروق بھائی شریک تھے ۔

جواب چھوڑیں