ملک میں ثقافتی نشاۃ ثانیہ کی ضرورت: وینکیا نائیڈو

نائب صدرجمہوریہ ایم وینکیا نائیڈونے ہندوستان کی آزمودہ روایات اور طریقہ کار کی تشہیر کے ذریعہ ملک میں ثقافتی نشاۃ ثانیہ پیدا کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔انہوں نے سنکرانتی فیسٹول کے موقع پر سورنا بھارتی ٹرسٹ کی دوسری یوم تاسیس تقاریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ طرز زندگی میں تبدیلیوں کو اختیار کرنے اور صحت مند زندگی کے قدیم روایتی طریقہ کار کے طرف رجوع ہونے کا تمام ہندوستانیوں کے لئے وقت آگیا ہے ۔ ہمیں ’ ہمارے آباء و اجداد کے طریقہ کار اور روایات پر عمل کرنے اور مغربی طرز زندگی کو چھوڑدینے کی ضرورت ہے ۔ وینکیانائیڈونے کہا کہ روایتی غذائی عادتیں اور طریقہ کار نہ صرف آزمودہ بلکہ صحت مند بھی رہے ہیں کیو ں کہ ہر موسم اور علاقہ کی ضروریات کے مطابق یہ موزوں ہیں۔ہمیں صحت مند غذائی عادتیں اختیار کرنے کے لئے نوجوانوں میں بیداری پیدا کرنے اور ہماری آسان لیکن موثر طرز زندگی کی طرف رجوع ہونے کی ضرورت ہے ۔اسی طرح دور قدیم کے ہندوستانی یوگا سے صحت مند دماغ اور صحت مند جسم کا میل ممکن ہے ۔ انہوں نے نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ زراعت پر دوبارہ توجہ مرکوز کریں جو ہندوستانی معیشت کی ریڑھ کی ہڈی ہے ۔انہوں نے کہا کہ قدرتی زراعت کو زیادہ اہمیت دینے اور کیمیکل کھاد کے استعمال کو کم کرنے کا یہ موزوں وقت ہے ۔انہو ں نے کہا کہ زرعی شعبہ کے بنیادی طریقہ کار سے تشریق کی ضرورت ہے ۔انہو ں نے کہا کہ زراعت کے ڈھانچہ میں مرکز اور بیشتر ریاستی حکومتوں کی مداخلت اور پالیسیوں کے ذریعہ تبدیلی ضروری ہے ۔ مادری زبان اور مقامی زبانوں کی اہمیت کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہر کسی کو اپنی مادری زبان کے تحفظ ’ فروغ اور تشہیر کے لئے آگے آنا چاہئے ۔انہوں نے کہا کہ روایتی خاندانی نظام ہندوستان کا فخر ہے ۔خِاندانی اقدار کے تحفظ کی ضرورت ہے ۔ہماری روایات اور طریقہ کار سے نہ صرف سماجی تانے بانے مستحکم ہوسکتے ہیں بلکہ مختلف طبقات میں بندھن پیدا ہوسکتا ہے ۔انہو ں نے کہا کہ ہندوستانی ہمیشہ حصہ داری ’ دیکھ بھال اور فطرت کی عبادت کے فلسفہ میں یقین رکھتے ہیں۔سنکرانتی کے موقع پر ہم صحت مند ’ مستحکم ’ خوش حال اور مبسوط ہندوستان کی تعمیر کے کاز کے لئے خود کو دوبارہ وقف کریں۔

جواب چھوڑیں