الیکشن میں پیسہ کے بہاؤ اور پیڈ نیوز کے تدارک کے اقدامات

جوائنٹ چیف الیکٹورل آفیسر تلنگانہ روی کرن تروملا نے کہا کہ عام انتخابات 2019 کے دوران پیسہ کے بہاؤ، شراب کے استعمال ، پیڈ نیوز کے تدارک اور نفرت انگیز تقاریر کی روک تھام کیلئے الیکشن کمیشن کی جانب سے ضروری اقدامات کئے جارہے ہیں۔ آل انڈیا ریڈیو پر آج منعقدہ مذاکرہ سے خطاب کرتے ہوئے انہوںنے کہا کہ مثالی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کے مرتکب افراد کے خلاف سخت کاروائی کی جائے گی ۔ روی کرن نے کہا کہ الیکشن کمیشن کی جانب سے انتخابات کے دوران مثالی ضابطہ اخلاق کے نفاذ کے متعلق تفصیلی طور پر رہنمایانہ خطوط تیار کئے گئے ہیں۔ اور ضابطہ اخلاق کی سیاسی جماعتوں کے امیدواروں یا ذرائع ابلاغ کی جانب سے خلاف ورزی کی صورت میں قانون کے تحت ضروری کاروائی کی جائے گی ۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ عام انتخابات 2019 کے پیش نظر ملک بھر میں10مارچ سے مثالی ضابطہ اخلاق کا نفاذ عمل میں آچکا ہے۔ روی کرن نے کہا کہ مثالی ضابطہ اخلاق کے نفاذ کا مقصد تمام سیاسی جماعتوں کو انتخابات کے دوران یکساں مواقع فراہم کرنا ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ مثالی ضابطہ اخلاق کے نفاذ پر کڑی نظر رکھنے کیلئے ریاست بھر میں فلائنگ اسکواڈس اور سرویلینس ٹیمس کو متحرک کردیا گیا ۔ اس کے علاوہ انہوںنے عوام کو C-VIGIL موبائیل اپلیکیشن ڈاؤن لوڈ کرتے ہوئے مثالی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی واقعات کو الیکشن کمیشن آف انڈیا کی نظر میں لانے کا مشورہ دیا ۔ انہوںنے کہا کہ شکایت درج کرانے کے اندرون 100 منٹ خضوصی دستوں کو روانہ کرتے ہوئے اقدامات کئے جائیں گے ۔ انہوںنے مزید کہا کہ ٹول فری نمبر1950 پر بھی شکایت کی جا سکتی ہے ۔ سیاسی جماعتوں اور امیدواروں کی جانب سے رائے دہندوں پر اثر انداز ہونے کیلئے ٹویٹر ، فیس بک اور واٹس اپ کے استعمال کے متعلق روی کرن نے کہا کہ ضلع اور ریاستی سطح پر سماجی ویب سائٹس پر نظر رکھنے کیلئے مانیٹرنگ کمیٹیوں کی تشکیل عمل میں لائی جارہی ہے۔

جواب چھوڑیں