امریکہ سے ورچول سم کی تفصیلات طلب کی جائیں گی

ورچول سم کے سرویس پرووائیڈر سے تفصیلات طلب کرنے امریکہ سے درخواست کی جائے گی۔ عہدیداروں نے یہ بات بتائی۔ پلوامہ حملہ میں جیش کے خودکش بمبار اور اس کے پاکستانی وکشمیری آقاؤں نے ورچول سم کے ذریعہ ہی آپس میں بات چیت کی تھی۔ تحقیقات سے پتہ چلا ہے کہ خودکش بمبار عادل ڈار سرحدپارجیش محمد سے مسلسل ربط میں تھا۔ حملہ کا اصل مقصد منصوبہ ساز مدثرخان، انکاؤنٹر میں ماراجاچکا ہے۔ دہشت گرد، نیاطریقہ کار اختیارکررہے ہیں۔ وہ امریکہ میں ایک سرویس پرووائیڈر کی تیارکردہ ورچول سم استعمال کرتے ہیں۔ اس ٹکنالوجی میں، کمپیوٹر ایک فون نمبر جنریٹ کرتا ہے اور یوزر‘ اپنے اسمارٹ فون پر سرویس پروائیڈر کا ایپ ڈاؤن لوڈ کرتے ہیں۔ اس فون نمبر کو واٹس ایپ، فیس بک، ٹیلی گرام یا ٹوئٹر جیسے سوشل نٹ ورکنگ سائٹس سے جوڑدیاجاتا ہے۔ پلوامہ حملہ میں عادل ڈار، جیش کا آقا اور مدثرخان یہی ٹکنالوجی استعمال کررہے تھے۔

جواب چھوڑیں