گنٹور اور نرسا راؤ پیٹ میں دوبارہ رائے دہی۔الیکشن کمیشن کے احکامات

آندھرا پردیش میں پارلیمنٹ اور اسمبلی انتخابات کے دوران حکمراں جماعت تلگودیشم پارٹی اور اپوزیشن وائی ایس آر کانگریس کے کارکنوں میں ہوئے تصادم کی وجہ سے دو مراکز پر رائے دہی متاثر ہوئی جس کی وجہ سے وہاں دوبارہ رائے دہی منعقد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔ گنٹور ایسٹ حلقہ اسمبلی کے پولنگ بوتھ نمبر244 اور نرسا راؤ پیٹ میں پولنگ بوتھ نمبر94 میں الیکشن کمیشن کی جانب سے دوبارہ رائے دہی منعقد کرنے کیلئے احکامات جاری کئے گئے ۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری کردہ احکامات کے مطابق یہ فیصلہ کلکٹر گنٹور کی جانب سے دی گئی رپورٹ کی بنیاد پر کیا گیا ۔ حلقہ اسمبلی گنٹور کے پولنگ بوتھ نمبر244 پر جمعرات کی رات ڈرامائی مناظر دیکھے گئے تھے ۔ رائے دہی کے مقررہ وقت 6 بجے کے بعد بھی رائے دہندے قطار میں موجود تھے ۔ جس کی وجہ سے عہدیداروں نے 300 افراد کو ووٹ سلپ حوالہ کئے تھے مگر چونکہ اس مرکز رائے دہی کو کمپاونڈ وال نہیں تھی اور قطار میں عوام کی بڑی تعداد کھڑی تھی نیز فراہم کردہ ووٹنگ سلپس سے کہیں زیادہ افراد نے ووٹ ڈالا تھا ۔ اُس دوران تلگودیشم پارٹی جنا سینا پارٹی ، وائی ایس آر سی پی کے قائدین وکارکنان وہاں پہنچ گئے جس کی وجہ سے کشیدگی پیدا ہوگئی ۔ پولیس کو لاٹھی چارج کرتے ہوئے قابو پانا پڑا۔ آخر میں رات 11:30 بجے ریٹرننگ آفیسر نے رائے دہی روک دینے کا فیصلہ کیا ۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے حالات کا جائزہ لینے کے بعد یہاں دوبارہ رائے دہی منعقد کرنے کا فیصلہ لیا گیا ۔ دوسری طرف نرسا راؤ پیٹ کے کیسا نویلی بوتھ نمبر94 میں موک پولنگ کے دوران ڈالے گئے50 ووٹوں کو حذف نہیں کیا گیا اور حقیقی پولنگ کے بعد ڈالے گئے ووٹوں سے50ووٹ زیادہ پائے گئے۔ اس حقیقت کو محسوس کرتے ہوئے بوتھ نمبر94 پر بھی دوبارہ رائے دہی منعقد کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

جواب چھوڑیں