چندرا بابو نائیڈو کی سونیا گاندھی سے ملاقات

چیف منسٹر آندھراپردیش و صدر تلگودیشم پارٹی این چندرابابو نائیڈو نے صدرنشین یوپی اے سونیا گاندھی سے آج نئی دہلی میں ملاقات کی۔ تقریباً 45 منٹ تک جاری اس ملاقات کے دوران دونوں قائدین نے پارلیمنٹ انتخابات کے امکانی نتائج اور غیر بی جے پی حکومت کی تشکیل کے موضوع پر تبادلہ خیال کیا۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ کانگریس کے کٹر حریف سمجھے جانے والے چندرابابو نائیڈو نے پہلی بار سونیا گاندھی سے ملاقات کی۔ ملاقات کے دوران چندرابابو نائیڈو نے سونیا گاندھی کو ملک کے مختلف علاقائی جماعتوں کی طاقت کے بارے میں واقف کرایا۔ دوسری طرف 23 مئی کو سونیا گاندھی کی قیادت میں غیر بی جے پی سیاسی جماعتوں کا مشاورتی اجلاس منعقد شدنی ہے۔ نائیڈو اور سونیا گاندھی نے اس مشاورتی اجلاس کے متعلق لائحہ عمل تیار کرنے پر بھی تبادلہ خیال کیا بعد ازاں چندرا بابو نائیڈو نے کانگریس قائد سام پتروڈا سے بھی ملاقات کی۔ قبل ازیں مرکز میں غیر بی جے پی حکومت کی تشکیل کیلئے اپنی کوششوں میں تیزی لاتے ہوئے تلگودیشم پارٹی کے سربراہ و چیف منسٹر آندھرا پردیش این چندرا بابو نائیڈو نے نئی دہلی میں اہم اپوزیشن قائدین کے ساتھ دوسرے مرحلہ کی بات چیت کی۔چیف منسٹر اے پی چندرا بابو نائیڈو نے اتوار کو راہو ل گاندھی ، صدرنیشنلسٹ کانگریس پارٹی ( این سی پی ) شرد پوار سے ملاقات کی ۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ مرکز میں غیر بی جے پی حکومت کی تشکیل کیلئے جمعہ کے دن نائیڈو، اہم سیاسی قائدین سے بات چیت کیلئے نئی دہلی پہنچے تھے ۔ وہ آج راہول گاندھی ، شرد پوار، شرد یادو سے دوبارہ ملاقات کی ۔ گذشتہ روز چندرا بابو نائیڈو نے کمیونسٹ جماعتوں کے قائدین سے بھی ملاقات کی تھی ۔ نائیڈو نے لکھنو میں بہوجن سماج پارٹی قائد مایاوتی اور سماج وادی پارٹی قائد اکھلیش یادو سے بھی ملاقات کی تھی ۔ چندرا بابو نائیڈو کی مایاوتی اور اکھلیش یادو سے ملاقات کے بعد راہول گاندھی اور شردپوار سے دوبارہ ملاقات کو سیاسی حلقوں میں کافی اہمیت دی جارہی ہے کیونکہ یہ ملاقات مایاوتی اور اکھلیش یادو سے ملاقات کے بعد ہورہی ہے۔ جنہوںنے مخالف بی جے پی اتحاد کی اب تک کھلے عام تائید نہیں کی ہے ۔ چیف منسٹر اے پی کی یہ کوشش غیر این ڈی اے اتحاد کے سیاسی پارٹیوں کو ایک پلیٹ فارم پر لانا ہے تاکہ این ڈی اے اتحاد کو اکثریت حاصل نہ ہونے کی صورت میں تشکیل حکومت کا دعویٰ پیش کیا جاسکے ۔ اس سلسلہ میں چندرا بابو نائیڈو نے پہلے مرحلہ میں ٹی ایم سی سربراہ ممتا بنرجی، قومی کنوینر عام آدمی پارٹی اروند کجریوال اور سی پی ایم جنرل سکریٹری سیتا رام یچوری سے ملاقات کی تھی۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہے کہ گذشتہ پارلیمنٹ انتخابات میں تلگودیشم پارٹی ، این ڈی اے اتحاد کا حصہ تھی تاہم ریاست آندھرا پردیش کو خصوصی موقف دینے سے این ڈی اے حکومت کے انکار کے بعد ٹی ڈی پی، این ڈی اے اتحاد سے علیحدہ ہوگئی تھی ۔ دوسری طرف تلگودیشم پارٹی اور کانگریس کی جانب سے آئندہ حکومت تشکیل دینے کے متعلق اعتماد ظاہر کیا جارہا ہے ۔

جواب چھوڑیں