مغربی بنگال میں این آر سی کی ضرورت نہیں

چیف منسٹر مغربی بنگال ممتابنرجی نے آج وزیر داخلہ امیت شاہ سے ملاقات کی اور شہریت سے متعلق نیشنل رجسٹر (این آر سی) سے متعلق اُمور پر بات چیت کی۔ مرکزی وزیر کے نارتھ بلاک چیمبر میں چیف منسٹر مغربی بنگال نے بات چیت کرتے ہوئے این آر سی کے تعلق سے تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ بنگال میں اس کی ضرورت نہیں ہے۔ حکومت ہند کی جانب سے این آر سی کو روبہ عمل لایا جارہا ہے تاکہ حقیقی ہندوستانیوں شہریوں کی شناخت کو یقینی بنایا جاسکے۔ مرکزی وزیر کے ساتھ ہوئی بات چیت کے تعلق سے ممتابنرجی نے کہا کہ مرکزی وزیر نے مغربی بنگال میں این آر سی کے تعلق سے کچھ نہیں کہا جب کہ میں نے اپنے موقف سے اُنہیں واقف کرواتے ہوئے کہا کہ مغربی بنگال میں این آر سی کی ضرورت نہیں ہے۔ اخباری نمائندوں کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے چیف منسٹر مغربی بنگال نے کہا کہ انہوں نے مرکزی وزیر کو ایک مکتوب حوالے کردیا ہے اور بتایا کہ ریاست میں این آر سی کی ضرورت نہیں ہے۔ کئی حقیقی رائے دہندوں کے نام شامل نہیں ہے، اس تعلق سے جائزہ لیا جانا چاہیے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ انہوں نے امیت شاہ کو ایک مکتوب سپرد کرتے ہوئے مختلف اُمور سے واقف کروایا۔ ترنمول کانگریس ریاست میں شہریوں سے متعلق نیشنل رجسٹر کے خلاف ہے اور اس سلسلہ میں احتجاج بھی کیا جاچکا ہے جب کہ ریاستی بی جے پی یونٹ کی جانب سے مغربی بنگال میں این آر سی کو روبہ عمل لانے کا مطالبہ کیا جارہا ہے۔ مغربی بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے کہا تھا کہ اگر پارٹی 2021ء کے اسمبلی انتخابات میں برسراقتدار آجائے تو یہاں بھی این آر سی کو روبہ عمل لایا جائے گا۔ آسام میں این آر سی سے متعلق قطعی دستاویز میں 19لاکھ سے زائد افراد کے نام شامل نہیں ہے جن میں سے اکثریتی کا تعلق ہندی بولنے والوں سے ہے۔ چیف منسٹر مغربی بنگال نے ایک دن قبل وزیر اعظم نریندر مودی سے ملاقات کرکے مغربی بنگال کے نام کی تبدیلی کی جانب توجہ مبذول کراوتے ہوئے مغربی بنگال کا نام بنگلہ رکھنے کا مطالبہ کیا تھا اور اب انہوں نے مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ سے ملاقات کے موقع پر بھی اس سلسلہ میں توجہ مبذول کرواتے ہوئے ریاست کا نام تبدیل کرنے پر زور دیا۔ پروگرام کے مطابق ممتابنرجی نے مرکزی وزیر سے ملاقات کی اور ریاست کا نام تبدیل کرنے کے لئے مرکزی وزیر کی بھی مزید توجہ مبذول کروائی تاکہ مرکزی امداد عاجلانہ طور پر حاصل ہونے کی راہ ہموار ہوسکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *